کیا فردوس عاشق اعوان اور قادر مندو خیل کی لڑائی کی ویڈیو جاوید چوہدری کی مرضی سے لیک کی گئی؟جانیے مکمل تفصیل

اردو نیوز! وزیر اعلیٰ پنجاب کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان اور پاکستان پیپلز پارٹی کے رکن قومی اسمبلی قادر مندو خیل کی لڑائی کی ویڈیو گزشتہ روز سے زیر بحث ہے۔ سوشل میڈیا پر اس لڑائی کے حوالے سے ٹرینڈز بھی چل رہے ہیں اور لوگ اپنی اپنی رائے دے رہے ہیں۔بعض لوگوں کا خیال کہ اگر لڑائی آف دی ریکارڈ ہوئی تھی تو اس کی ویڈیو لیک کرنے کی کیا ضرورت تھی؟

کچھ سوشل میڈیا صارفین اور صحافی ویڈیو لیک کرنے کو ریٹنگ کا چکر قرار دے رہے ہیں اور اس کا ذمہ دار اینکر پرسن جاوید چوہدری کو قرار دے رہے ہیں۔اس حوالے سے انڈیپنڈنٹ اردو کی ویب سائٹ پر شائع ہونے والی رپورٹ میں بھی جاوید چوہدری کے کردار پر دبے لفظوں میں انگلی اٹھائی گئی ہے۔ انڈیپنڈنٹ اردو کے مطابق ” ویڈیو لیک ہونے کے حوالے سے جب ایکسپریس نیوز کے ملازم سے پوچھا گیا کہ کیا پروگرام اینکر جاوید چوہدری کی مرضی سے یہ ویڈیو لیک کی گئی تو ان کا کہنا تھا کہ وہ پروگرام کے بعد آفس سے چلے گئے تھے جبکہ دیگر ٹیم وہاں موجود تھی مگر اب تک جاوید چوہدری کی جانب سے اظہار برہمی نہیں کیا گیا۔”خیال رہے کہ

گزشتہ روز ایکسپریس نیوز کے پروگرام کل تک میں شریک مہمانوں فردوس عاشق اعوان اور قادر مندوخیل میں تلخ جملوں کے تبادلے کے بعد ہاتھا پائی ہوگئی تھی۔ جھگڑے کے دوران فردوس عاشق اعوان نے پی پی رہنما کو تھپڑ رسید کردیا تھا۔ اس حوالے سے ان کا کہنا ہے کہ قادر مندوخیل نے انہیں اور ان کے والد کو گالیاں دیں۔ فردوس عاشق اعوان نے قادر مندوخیل کے خلاف قانونی کارروائی بھی شروع کردی ہے۔

Leave a Comment

error: Content is protected !!